آزاد حسین آزاد

Spread the love

آزاد حسین آزاد
رکن، پاکستان 

پیدائش : اکتوبر 1980، منڈی بہاؤالدین رکن سے تعلق رکھنے والے خوبصورت لب و لہجے اور منفرد انداز کے نوجوان شاعر، کراچی یونیورسٹی سے اردو میں ایم اے کیا اور آج کل پاکستان کی مسلح افواج میں ملازمت کے فرائض انجام دے رہے ہیں۔ مسلح افواج میں ملازمت کے سبب ادبی سرگرمیاں محدود ہیں۔ اب تک ان کی شاعری کے دو مجموعے ”کوئی بات ہے جو اداس ہو“ اور ”مرے سب لفظ تیرے ہیں“ منظر عام پر آ چکے ہیں پہلا مجموعہ 2003 دوسرا مجموعہ 2012 میں شائع ہوا۔ اس کے علاوہ ملک کے مختلف ادبی رسالوں اور اخبارات میں ان کا کلام شائع ہوتا رہا ہے۔ پہلی غزل جنگ سنڈے میگزین میں ۱۹۹۷ میں شائع ہوئی۔

آزاد حسین آزاد کی شاعری