کتنی مُشکل راتیں کاٹ کے دِن چوکھٹ پر آئے …. غزل …. نیلم ملک

Spread the love

کتنی مُشکل راتیں کاٹ کے دِن چوکھٹ پر آئے
دیوی دان کرے آسانی اب تو پَٹ پر آئے

گر وہ بولے کھول دے اِس معصوم کے پر صیاد!
کتنا پیار کبوتر کو طوطے کی رَٹ پر آئے

گھر سے نکال گلی میں لائے عِشق ہے یا عِفریت!
جس جس کا دروازہ پیٹے وہ کَھٹ کَھٹ پر آئے

اَب بھی نہیں دِل دسترخواں پر سیر ہُوئے مہمان!
آبِ عِشق تو اِتنے برسوں میں تلچھٹ پر آئے

جا پہنچے بَد رنگ دوشالہ اوڑھے درباں پاس
رَنگ محل کی شہزادی جب اپنی ہَٹ پر آئے

دُھوپ کی آخری کترن کھینچ کے آنکھوں پر لی باندھ
تاکہ شام نہ ڈَھل جائے جب تُو پَنگھٹ پر آئے

دَبی دَبی سی ہنسی ہنسیں سب چوپائے، پَنچھی
سارا جنگل گُھوم کے شیرنی واپس بَھٹ پر آئے

3 تبصرے “کتنی مُشکل راتیں کاٹ کے دِن چوکھٹ پر آئے …. غزل …. نیلم ملک

  1. Simply desire to say your article is as surprising. The clarity in your post is simply spectacular and i could assume you are an expert on this subject. Well with your permission allow me to grab your RSS feed to keep updated with forthcoming post. Thanks a million and please keep up the rewarding work. https://khebranet.com/adobe-photoshop-lightroom-cc/

اپنا تبصرہ بھیجیں