کیا واقعی کورونا وائرس چین نے لیبارٹری میں تیار کیا ہے؟

Spread the love

دنیا بھرمیں کورونا وائرس کی وجہ سے جہاں پریشان کن خبریں سننے کو ملی ہیں وہیں اس وائرس کے حوالے سے کئٰی قیاس آرائیوں نے بھی جنم لیا ہے۔ ان افواہوں میں ایک یہ بھی شامل ہے کہ کورونا وائرس چین کےشہر ووہان میں قائم ایک لیبارٹری میں بنایا گیا تاہم چین اس کی تردید کرتا ہے۔
اسی حوالے سے فرانس کے صدر عمانویل میکخواں بھی میدان میں آگئے ہیں اور انہوں نے واضح کیا ہے کہ اس حوالے سے کوئی شواہد نہیں ہیں کہ یہ کورونا وائرس ووہان لیب میں بنایا گیا۔
برطانوی نیوز ایجنسی کے مطابق فرانسیسی صدارتی محل سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ اس بات کے کوئی شواہد نہیں ملے کہ یہ وائرس چین کے شہر ووہان میں قائم پی فور لیبارٹری میں بنایا گیااور وہاں سےلیک ہوا۔ انہوں نے کہا امریکی میڈیا میں ووہان میں موجود لیبارٹری اور کورونا وائرس کے درمیان جو تعلق ظاہر کیا جارہا ہے اس کے کوئی ٹھوس شواہد موجود نہیں ہیں۔
دوسری جانب امریکی صدر نے بدھ کے روز کہا ہے کہ یہ جاننے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ آیا یہ وائرس ووہان لیبارٹری میں بنایا گیا یا نہیں جبکہ امریکی وزیرخارجہ مائیک پومپیو بھی کہہ چکے ہیں کہ تمام معاملات کو واضح ہونا چاہیئے۔

یہ بھی پڑھیے: اداکارہ زائرہ وسیم نے مداحوں کواپنی تعریف کرنے سے روک دیا،وجہ کیا بنی؟

گزشتہ روزامریکہ میں کورونا وائرس کے حوالےسے یومیہ بریفنگ کے دوران وائٹ ہاؤس میں ایک کنزرویٹو صحافی نے سوال کیا کہ سابق صدر اوباما کی انتظطامیہ نے چین کے ووہان انسٹیٹیوٹ آف وائرولوجی کو 37 لاکھ ڈالر کی امداد کیوں کی تھی۔ یہ وہی ادارہ ہے جس کے بارے میں نامعلوم امریکی اہلکاروں نے کہا ہے کہ وہاں سے کورونا وائرس لیک ہوا۔اس پر امریکی صدر ٹرمپ کا جواب تھا ’ہم بہت جلد وہ امداد ختم کر دیں گے۔ میں حیران ہوں کہ اس وقت صدر کون تھا؟‘ یہ گرانٹ سنہ 2015 میں ادا کی گئی۔
واشنگٹن پوسٹ نے رپورٹ کیا تھا کہ چین میں سفارتکار متفکر ہیں اور وہ ووہان لیبارٹری میں حفاظتی اقدامات سے مطمئن نہیں اور انھوں نے مدد طلب کی ہے۔امریکی صدر کو دنیا بھی میں کورونا وائرس کے حوالے سے سب سے زیادہ ہلاکتیں امریکہ میں ہونے سے متعلق بھی اختلافات ہیں۔

یہ بھی پڑھیے: کورونا ریلیف فنڈ میں سوئی ناردرن کا 19 ملین روپے کا عطیہ

ان کا کہنا تھا ’ہمارے ہاں دنیا میں سب سے زیادہ ہلاکتیں نہیں ہوئیں۔ سب سے زیادہ ہلاکتیں چین میں ہوئی ہوں گی۔‘
جان ہاپکنز یونیورسٹی کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق ہلاکتوں کے معاملے میں اس وقت امریکہ سر فہرست ہے۔
تاہم جمعے کو چین نے کہا اس کے ہلاکتوں کو دوبارہ شمار کیا ہے اور گنتی کے مختلف طریقہ کار کے بعد اب وہاں اب تک 4000 ہلاکتیں ہوئی ہیں۔

کیا واقعی کورونا وائرس چین نے لیبارٹری میں تیار کیا ہے؟” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں