نیلم ملک کی دو غزلیں …اردو غزل … شاعری

Spread the love

غزل

مُسلسل سوچتے تھے آسمــاں والے کے بارے میں
ہمیــں معلـوم ہے اب ریت پر نقشے کے بارے میں
۔۔
بھــرے دربار میں عُقـدہ کُھلا خوابِ درخشاں کا
قبیلــے سے گواہــی مِـل گئی کُرتے کے بارے میـں
۔۔
چِھچَھلتــا ایک پَـل حاصـل ہمــاری کُل مَحبّت کا
زمانوں پر محیط افسانے اِس جَھپکے کے بارے میں
۔۔
ہیں اَن دیکھی زمینیں خُوب تر مفتوح شہروں سے
سُنا اور چل پڑے ، سوچا نہیــں تکیـے کے بارے میں
۔۔
تو کیا کہتـا ہـے پِھـر اپنـے گَریباں گِیر ہاتھــوں کا؟
کوئی جب پُوچھتا ہو گا ترے حُلیے کے بارے میں!
۔۔
تــرازو چھیــن لیــں یا اُس کو بینـائی عطـا کـر دیـں
ہمیں کُچھ فیصلے کرنے ہیں اِک اندھے کے بارے میں
۔۔
جہـاں پـر تال بدلــے گـی ، وہیـں پـر چال بدلـے گـی
کہ رَقّاصـہ کو سب معلُـوم ہــے طَبلے کے بارے میں
۔۔
ہیولـے سب مُجسّــم اور ہَـوا میـں تیرتــی سَطــریں
لِکھا ہے پڑھتـے پڑھتـے نِیند کے وَقفے کے بارے میں
۔۔
پتنــگیں اور کبوتـــر اُڑتــے پـا کــر سوچتــے رہیــے
گُلُوئــے مَـرمَـریں اور مُہلِکی مانجھے کے بارے میں
۔۔
اُسـے کِس مَصلـحت نـے آخِــرش خامــوش کر ڈالا!!
خُدا اَب کُچھ نہیں کہتا کِــسی بَندے کے بارے میں

غزل

نُـور بھـری پـر جـب راتیـں بـے نُور ہُوئیں
چــاند کـی پَریـاں مـرنے پر مجبُور ہُوئیں
۔۔
ایک چُھوَن میں ٹھنڈی پوریں جاگ اُٹھیں
بے رَس آنکھیـں جیـون سے بھرپُور ہُوئیں
۔۔
شہر میں چلتے پِھرتے، تُجھ کو دیکھ لیا
مُجھ پر یہ پتھریلی سـڑکیں طُور ہُوئیں
۔۔
دُور سے آتی دَھـم دَھـم کی آواز میں گُـم
کان جَھڑیں گے ڈھولکیاں جب کُور ہُوئیں
۔۔
شہنائــی کــے رَس میـں رَسنـے والـوں پـر
ماتھـــا پیٹتـــی زرد رُتیـــں رنجُــور ہُوئیں
۔۔
چِڑیاں پَنکھ پســارے اُن پر خُوب ہنسیں
تِیتریاں پِنجروں میں جب محصُور ہُوئیں
۔۔
دیـوی مـوتی پھـانکے ، کِرچیـں دان کـرے
داسـی کو کِرچیــں بھـی موتی چُور ہُوئیں
۔۔
سـاتویـں دُھـن میـں شعر کہـا مستانی نـے
چھ جہتیـں جب اُس کی خاطِر پُور ہُوئیں

نِیلم ملک

اپنا تبصرہ بھیجیں