قیس جاتا ہے تو آزاد چلا آتا ہے … غزل … آزاد حسین آزاد

Spread the love

قیس جاتا ہے تو آزاد چلا آتا ہے
دشت قرنوں سے ہی آباد چلا آتا ہے

دل کوئی کوہِ بلوچاں ہے کہ ہر ایک یہاں
لے کے تیشہ، بنے فرہاد، چلا آتا ہے

درد کی فصل ہری رہتی ہے بے موسم بھی
ڈالنے روز کوئی کھاد، چلا آتا ہے

دھیان آتا ہے، مصیبت میں اسے، اپنوں کا
اس پہ پڑتی ہے جو افتاد، چلا آتا ہے

آزاد حسین آزاد

اپنا تبصرہ بھیجیں