میرے جیسی ہی اک پہیلی ہے … غزل … انیتا اجرک

Spread the love

میرے جیسی ہی اک پہیلی ہے
یہ اداسی مِری سہیلی ہے

کوئی آسیب بھی نہیں ہے یہاں
کتنی خالی یہ دل حویلی ہے

سانپ سا سرسرا رہا ہے کہیں
اس کھنڈر میں کوئی چنبیلی ہے

اس پہ کِھلتے ہیں رنگ رنگ کے پھول
اک چمن سی مِری ہتھیلی ہے

ایک میں ہی نہیں یہاں اجرک
میری تنہائی بھی اکیلی ہے

انیتا اجرک ؔ

اپنا تبصرہ بھیجیں