شور و شر، نفرت محبت سب نگلتی ہے زمیں … نیل احمد

Spread the love

شور و شر، نفرت محبت سب نگلتی ہے زمیں
جو کھلاتے ہیں اسے، وہ سب اگلتی ہے زمیں
ریت ہاتھوں میں سماتی ہی نہیں ہے دیر تک
اب سمجھ آیا کیوں پیروں سے نکلتی ہے زمیں
یہ مظاہر بھی بنے ہیں فطرت انسان پر
بے سکونی تہہ میں ہو تو پھر اچھلتی ہے زمیں
وہ فریب ذات ہے یا پھر نمائش آب کی
یوں سرابوں سی بیاباں میں پھسلتی ہے زمیں
شعر کے جوہر میں معنی کا سمندر موجزن
لہر جیسے پاؤں کے نیچے بدلتی ہے زمیں
نیل احمد
Shoor o shar, nafrat mubab’bat sab negalti ha zamin
Jo khelatay hain isay, vo sab ogalti ha zamin
Rait hathon main samati hi nahi ha dair tak
Ab samaj aya q payron say nekalti ha zamin
Ye mazahir bhi banay hain fitrat e insaan per
Bay-sakoni tah main ho tu phir ochalti ha zamin
Vo faraab e zaat ha ya phir nomaish aab ki
Youn sarabon si bayaban main phesalti ha zamain
Shair kay johar main manay ka samandar mojzan
Layhar jaysay paon kay nechay badalti ha zamain
NEEL AHMED

اپنا تبصرہ بھیجیں